Wednesday, March 30, 2016

بارھویں محفل نجف میں آپ کی ہے فاطمہ

تو یقینً حِصّئے پیغمبری ہے فاطمہ
زوجئے شیرِ خدا جانِ نبی ہے فطمہ
جس وصیلہ سے دعائیں ہیں ہماری مستجاب
کبریا کے نور کی وہ روشنی ہے فاطمہ
اے محمد ظنز کرتے ہیں جو ان  کے واستے
ہر زمانہ میں جوابِ ابتری ہے فاطمہ
چاہے بیٹی چاہے زوجہ چاہے رتبہ ماں کا ہو
تیرے ہر کردار میں شائستگی ہے فاطمہ
یہ حقیقت صرف جانے مرتضی یا مصطفی
دینِ حق کے واستہ کیوں قیمتی ہے فاطمہ
مرتبہ امّ ابیہہ کا زمانہ جان لے
اپنی گودی میں امامت پالتی ہے فاطمہ
کیا نمازی کی دعا یوں ہی قبول ہو جائگی
بِاالیقیں تیرا وصیلہ لازمی ہے فاطمہ
دے کے خطبہ شان سے وہ بھرے دربار میں
کیسے حق حاصل کرے یہ جانتی ہے فاطمہ
کیوں نہ ہو رب کا کرم ابرار پر جس کے سبب
بارھویں محفل نجف میں آپ کی ہے فاطمہ
منقبت ذیشان کی منظور کر لے اے خدا
مجھ کو لگتا ہے خدا سے کہہ رہی ہے فاطمہ

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.