Sunday, November 27, 2016

Sukha hai gala sheh ka kaate nahi kat-ta hai

1. Qurbaniye sarwar se islam ka charcha hai
Wallah azal se yeh ahqar ka aqeedah hai

2. Abbas ki aamad sun kar hi la'eeń bhage
Thahrega yaha jo bhi yeh jaan lo marna hai

3. Masoom se asghar ke nazuk se tabassum se
Lashkar me qayamat ka har simt tahelka hai

4. Khakhi tha magar hur yeh batla gaya dunya ko
Zahra ka pisar pal me taqdeer badalta hai

5. Abbas ka sar rakh kar zano pe kaha sheh ne
Ek baar kaho bhai, bhai ki tamanna hai

6. Insaan ne dekha hai Nazro se naya manzar
Neze pe kata sar hai quraan sunata hai

7. Jab lahja e hyder me zainab ne padha khutba
Darbar me har janib chaya huwa sakta hai

8. Ay karbobala tujh par chehlum ho bahattar ka
Is kaar me ek tanha zainab ma kaleja hai

9. Sughra ki ziyarat ka armaan liye dil me
Jane ke liye yasrab betaab sakina hai

10. Aajaao azadaro shabbir ki majlis me
Farmane payamber hai har gham k madawa hai

11. Maqtool ki maqtal me qaatil ye gawahi de
Sukha hai gala sheh ka kaate nahi kat-ta hai

12. Zeeshan mujahid hai maula ka sare mimber
Har majlis o mahfil me haq baat wo kahta hai

✍ Zeeshan Azmi

*سوکھا ہے گلا شہ کا کاٹے نہیں کٹتا ہے*

١. قربانیِ سرور سے اسلام کا چرچا ہے
واللہ ازل سے یہ احقر کا عقیدہ ہے

٢. عبّاس کی آمد کو سن کر ہی لعیں بھاگے
ٹھہرے گا یہاں جو بھی یہ جان لو مرنا ہے

٣. معصوم سے اصغر کے نازک سے تبسم سے
لشکر میں قیامت کا ہر سمت تہلکہ ہے

٤. خاکی تھا مگر حرّ یہ بتلا گیا دنیا کو
زہرا کا پسر پل میں تقدیر بدلتا ہے

٥. عبّاس کاسر رکھ کر زانو پہ کہا شہ نے
اک بار کہو  بھائی بھائی کی تمنا ہے

٦. انسان نے دیکھا ہے نظروں سے نیا منظر
نیزہ پہ کٹا سر ہے قرآن سناتا ہے

٧. جب لہجۂ حیدر میں زینب نے پڑھا خطبہ
دربار میں ہر جانب چھایا ہوا سکتہ ہے

٨. اے کرب و بلا  تجھ پر چہلم ہو بہتّر کا
اس کار میں اک تنہا زینب کا کلیجہ ہے

٩. صغری کی زیارت کا ارمان لئے دل میں
جانے کے لئے یثرب بیتاب سکینہ ہے

١٠. آجاؤ عزاداروں شبّیر کی مجلس میں
فرمانِ پیمبر ہے ہر غم کا مداوا ہے

١١. مقتول کی مقتل میں قاتل یہ گواہی دے
سوکھا ہے گلا شہ کا کاٹے نہیں کٹتا ہے

١٢. ذیشان مجاہد ہے مولا کا سرِ منبر
ہر مجلس و محفل میں حق بات وہ کہتا ہے

✍  ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.