Saturday, September 16, 2017

پینے کی ادا یہ بھی ہے بے جام پیے جا

جینے کی ادا ایسی بھی ہوتی ہے جیے جا
غم ہوتا ہے گر دور اُسے یاد کیے جا

پرواہ نہ کر تو کبھی انجام کی آخر
راہیں ہیں اگر عشق کی ہموار چلے جا

کرتی ہے میرے دل پہ اثر تیری ادائیں
یوں سامنے میرے نہ میری جان ہنسے جا

پڑھنا اِسے جب یاد میری تجھکو ستائے
خط پیار کے لکھّے ہوئے تو ساتھ لیے جا

محبوب کی نظروں سے بجھا پیاس کی شدت
پینے کی ادا یہ بھی ہے بے جام پیے جا

احساس ترے عشق کا جب تک نہ ہو اس کو
ذیشان غزل پیار کی دن رات لکھے جا

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.