Monday, October 2, 2017

Apni mehfil se mat nikaal hame

Puchana aataa hai sawal hame
Bas hai haq baat ka khayal hame

Hum hain majboor apni fitrat se
Duniya ka kuch nahi malaal hame

Tu ne taareef ki magar jal ke
Kam se kam achchi de misaal hame

Shayeri har kisi ki achchi nahi
Chubhte hai dil me bad khayal hame

Shirk ke jaal me fansaa na hame
Rab se kal karna hai wisaal hame

Hum qasida tera hi padhte hain
Apni mehfil se mat nikaal hame

Shayeri hum ne ki baya'n haq ki
Aa ay Zeeshan ab sanbhal hame

✍ Zeeshan Azmi

پوچھنا آتا ہے سوال ہمیں
بس ہے حق بات کا خیال ہمیں

ہم ہیں مجبور اپنی فطرت سے
دنیا کا کچھ نہیں ملال ہمیں

تو نے تعریف کی مگر جل کے
کم سے کم اچھی دے مثال ہمیں

شاعری ہر کسی کی اچھی نہیں
چبھتے ہیں دل میں بد خیال ہمیں

شرک کے جال میں پنسا نہ ہمیں
رب سے کل کرنا ہے وصال ہمیں

ہم قصیدہ ترا ہی پڑھتے ہیں
اپنی محفل سے مت نکال ہمیں

شاعری ہم نے کی بیاں حق کی
آ اے ذیشان اب سنبھال ہمیں

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.