Tuesday, November 14, 2017

Aage Badhe Yeh Silsila Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Khamosh na baitho Sada Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein
Kyun Rehti Ho Tum Gham Zada Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Ab Aap Kah Dijiye Hum Se Shikayat Hai Jo kuch
Humse Hai Kaisa Ye Gila Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Tum Bhi Badhao Ek Kadam Hum Bhi Uthaaye Ek Kadam
Aage Badhe Yeh Silsila Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Tum Bhi Mohabbat se kaho Hum Bhi Mohabbat Se Kahein
Nafrat Ka Toote Fasla Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Teri Yeh Khamoshi Mujhe Bardaasht Hoti Hi Nahi
Tujh Ko Khuda Ka Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

Zeeshan Ki Hasrat Ko Samajh Ay Dilruba Jaane Jahan
Chaya Hai Sawaan Ka Nasha Kuch Tum Kaho Kuch Hum Kahein

✍ Zeeshan Azmi

موج غزل عالمی مشاعرہ نمبر ٨٢ میں
پیش  کیا  گیا  حقیر  کا   یکجا کلام:

خاموش نہ بیٹھو  سدا کچھ  تم کہو کچھ ہم کہیں
کیوں رہتی ہو تم غمزدہ کچھ تم کہو کچھ ہم کہیں

اب آپ کہ بھی دیجئے  ہم سے شکایت ہے جو  کچھ
ہم سے ہے  کیسا  یہ گلا کچھ  تم کہو کچھ ہم کہیں

تم  بھی  اٹھاؤ اک  قدم  ہم  بھی  اٹھائیں اک  قدم
آگے  بڑھے   یہ  سلسلہ  کچھ  تم کہو کچھ ہم کہیں

تم بھی  محبت  سے کہو ہم بھی محبت   سے کہیں
نفرت کا ٹوٹے   فاصلہ   کچھ  تم کہو کچھ ہم کہیں

تیری   یہ   خاموشی مجھے برداشت ہوتی ہی نہیں
تجھ کو خدا کا  واسطہ کچھ تم کہو کچھ ہم کہیں

ذیشان  کی حسرت  کو  سمجھ اے دلربا جانِ جہاں
چھایا ہے  ساون کا  نشا کچھ تم کہو کچھ ہم کہیں

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.