Friday, November 17, 2017

Aap ki aankhon se hote hai ishare kya kya

Zindagi dekh dikhaati hai nazaare kya kya
Aage aate hain abhi aur khasare kya kya

Khair ko shar se badal dunga kiya tha waada
Aaj shaitaa'n ne wahi kaam sanware kya kya

Hum se anjaan faqat tu hai yaha duniya me
Jante sab hain hunar aaj hamare kya kya

Hum ko andaaza hai sab harkate jismani ka
Aap ki aankhon se hote hai ishare kya kya

Jhooti  baatein na karo hum ko phansane ki kabhi
Hum ko maloom hain dhande tumhare kya kya

Aas jin doston se rakhta tha mai bhi paiham
Un se Zeeshan mile aaj sahare kya kya

✍ Zeeshan Azmi

سائبان ادب و ثقافت کی ہفتہ وار فی البدیہہ
طرحی نشست میں میری کاوش:

زندگی     دیکھ    دکھاتی   ہے نظارے   کیا کیا
آگے آتے     ہیں   ابھی   اور     خسارے  کیا کیا

خیر کو    شر سے    بدل دونگا    کیا تھا وعدہ
آج شیطاں      نے وہی    کام   سنوارے کیا کیا

ہم سے     انجان    فقط  تو   ہے یہاں دنیا میں
جانتے    سب    ہیں   ہنر     آج   ہمارے کیا کیا

ہم کو      اندازہ   ہے سب   حرکتِ جسمانی کا
آپ کی آنکھوں سے   ہوتے   ہیں اشارے کیا کیا

جھوٹی باتیں نہ کرو ہم   کو پھنسانے کی کبھی
ہم کو معلوم    ہیں دھندے   ہیں تمھارے کیا کیا

آس جن دوستوں سے رکھتا تھا میں بھی پیہم
ان    سے      ذیشان    ملے   آج سہارے  کیا کیا

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.