Monday, November 27, 2017

Be hisaab peete hain aap ki nazar se hum

Bazm e Sukhanwaraan ke tahat 95 wee'n bainul aqwaami fil badiha tarhi mushayera me meri kavish:

Ab sharab ki chahat hi nahi hame hum dam
Be hisaab peete hain aap ki nazar se hum

Honto par hansi kaise aayegi mere yaaro
Lamha lamha khata hai mujh ko zindagi ka gham

Tez daudta hai shaitaan aaj rag rag me
Is liye to lagta hai ab yaqeen bhi mubham

Bhooke pyaaso ka haq cheena ameero ne dekho
Aaj bhi gharibo ke aansoo bahte hai paiham

Logo ke liye yeh quran me nasihat hai
Chahiye unhe rona khoob aur hansna kam

Ab mo'ashere ko gukshan banane ki khatir
Gona chahiye har bandey me inquilabi dam

Zahr bikta hai duniya me me ba naame marham hi
Ab kahi nahi hai Zeeshan dard ka marham

✍ Zeeshan Azmi

بزمِ سخنوراں کی 95 ویں ہفتہ واری فی البدیہہ طرحی مشاعرہ میں میری کاوش :

اب شراب      کی چاہت ہی    نہیں ہمیں   ہمدم
بے حساب پیتے      ہیں آپ کی      نظر   سے ہم

ہونٹوں پر ہنسی     کیسے آئیگی      مرے  یارو
لمحہ لمحہ کھاتا ہے مجھ       کو زندگی  کا غم

تیز دوڑتا ہے      شیطان  آج       رگ رگ     میں
اس لئے تو لگتا     ہے اب  یقین          بھی مبہم

بھوکے پیاسوں کا حق چھینا امیروں نے دیکھو
آج بھی    غریبوں     کے آنسو بہتے    ہیں پیہم

لوگو کے        لئے یہ قرآن  میں        نصیحت ہے
چاہئے   انھیں         رونا خوب اور       ہنسنا کم

اب معاشرے       کو گلشن    بنانے      کی خاطر
ہونا چاہئے        ہر بندے     میں        انقلابی دم

زہر بکتا ہے        دنیا     میں بہ        نامِ مرہم ہی
اب کہیں نہیں        ہے ذیشان     درد کا     مرہم

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.