Saturday, November 11, 2017

Kaha zahra ne ro ro kar mere dilbar ka Chehlum hai

زمین و آسماں روتے ہیں کہ سرور کا چہلم ہے
مرے   مولا   مرے   آقا   مرے رہبر کا چہلم ہے

سکینہ   زینب  و  کلثوم کے ہمراہ مجلس  میں
کہا   زہرا  نے  رو رو کر میرے دلبر کا چہلم  ہے

جگر چھلنی ہوا جس کے سبب سے امّ فروا  کا
عزاداروں   یہ   وہ  شہزادئے  شبّر کا چہلم  ہے

بہاو  اشک مجلس میں وہ اک ننھے مجاہد  پر
رباب آتی  ہے  پرسہ کو علی اصغر کا چہلم  ہے

عزاداروں کرو   ماتم   وہ  ہم   شکل  پیمبر  کا
یہاں  لیلی  بھی آئی  ہے علی اکبر کا چہلم  ہے

غم  سرور میں زینب   کو  جو بچے یاد نہ  آئے
انھیں عون و محمد کے کٹے دو سر کا چہلم ہے

کٹائے   بازو جس نے علقمہ   پر دین  کی خاطر
سکینہ کے  چچا   وہ  مونس و یاور کا چہلم ہے

عزاداروں  مرے   ہندوستاں  نے  یہ شرف  پایا
یہاں   ذیشان گھر گھر  پہ بہتر گھر کا چہلم ہے

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.