Sunday, November 26, 2017

Usi jagah pe sitaara shanaas rahta hai

Mauje Sukhan ke tahat 214 wee'n bainul aqwaami fil badiha tarhi mushayera me meri kavish:

Khuda ko chorhne wala haraas rahta hai
Umeed tod ke har dam    udaas rahta hai

Nahi samajhta hai wo shakhs pyaas ka matlab
Ke jiske haath labaalab  gilaas rahta hai

Khuda ka fazl hai ke puri   umr   ay aurat
Teri hayat ka shauhar  libaas    rahta hai

Fuzool kharch na karna tu maal ko bande
Hisaab pura tere Rab   ke paas    rahta hai

Wo aadmi ka  to  bekaar    hai   yaha jeena
Badalti duniya me jo bad hawaas rahta hai

Khuda ko bhool gaya tha jaha'n kabhi mai bhi
Usi jagah   pe    sitaara shanaas rahta hai

Dil o dimaag se Zeeshan maine maana hai
Napi tuli hi zubaa'n par mithaas rahta hai

✍ Zeeshan Azmi

موجِ سخن کے تحت214 ویں بین الاقوامی
فی البدیہہ طرحی مشاعرہ میں میری کاوش:

خدا    کو چھوڑ نے     والا     ہراس    رہتا ہے
امید توڑ    کے      ہر دم       اداس     رہتا ہے

نہیں سمجھتا ہے وہ شخص پیاس کا مطلب
کہ جس     کے ہاتھ   لبالب     گلاس  رہتا ہے

خدا کا فضل ہے کہ      پوری  عمر اے عورت
تری     حیات     کا شوہر     لباس      رہتا ہے

فضول خرچ       نہ کرنا تو      مال کو بندے
حساب پورہ    ترے رب    کے پاس    رہتا ہے

وہ آدمی      کا تو بیکار       ہے یہاں    جینا
بدلتی دنیا      میں    جو  بد حواس رہتا ہے

خدا کو بھول گیا تھا جہاں  کبھی میں بھی
اسی جگہ  پہ       ستارہ شناس       رہتا ہے

دل و دماغ        سے ذیشان  میں نے مانا ہے
نپی تلی ہی      زباں     پر مٹھاس    رہتا ہے

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.