Saturday, November 25, 2017

Yeh shahr udaas itna zyaada to nahi tha

Pahle mere qasbe me ye dhoka to nahi tha
Chahre pe sharafat ka labadaa to nahi tha

Khamosh hain sab log har zulm pe paihum
Yeh shahr udaas itna zyaada to nahi tha

Ek dosare se bughz o hasad rakhna dilo me
Bachpan me mere aisa zamana to nahi tha

Insaan kabhi lagta hai   shaitaan kabhi tu
Imaan musalmaa tera aadhaa to nahi tha

Kuch faidey hasil ho mere sher se sab ko
Warna kabhi likhne ka  iradaa to nahi  tha

Jangal ke yeh kanoon se barbaad huwa hai
Zeeshan ka gulshan kabhi sahra to nahi tha

✍ Zeeshan Azmi

دیا عالمی آن لائن فی البدیہہ ٢٢٢ ویں طرحی مشاعرہ میں میری کاوش:

پہلے مرے     قصبہ  میں یہ دھوکا تو نہیں تھا
چہرے     پہ شرافت     کا لبادہ      تو نہیں تھا

خاموش ہیں    سب لوگ     ہر ظلم     پہ پیہم
یہ شہر    اداس     اتنا     زیادہ    تو نہیں   تھا

اک دوسرے سے  بغض و حسد رکھنا دلوں میں
بچپن      میں   مرے   ایسا   زمانہ تو نہیں تھا

انسان     کبھی لگتا ہے    شیطان     کبھی   تو
ایمان      مسلماں      ترا      آدھا    تو نہیں تھا

کجھ فائدے حاصل  ہو مرے شعر سے سب کو
ورنہ  کبھی   لکھنے   کا     ارادہ    تو نہیں تھا

جنگل    کے    یہ قانون     سے     برباد   ہوا ہے
ذیشان کا      گلشن  کبھی   صحرا تو نہیں تھا

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.