Sunday, December 24, 2017

Ab tujhe intezaar hai kiska

Aadmi      Soghwar           Hai      Kiska
Duniya Mein     Etebaar     Hai    Kiska

Main Musafir Hoon Tanha Manzil Ka
Dosh par Mere    Baar      Hai      Kiska

Sab Nazar Aate Hai Matlabi Hum  Ko
Dahar     Mein Aaj    Yaar   Hai    Kiska

Arzoo      Khatm      Hi     Nahi        Hoti
Aadmi       Ko Khumaar    Hai      Kiska

Tera     Parwardigaar   Sath    To    Hai
Ab      Tujhe      Intezaar     hai      Kiska

Dosto      Se      Khafa    Tu    Lagta Hai
Dil Pe       Zeeshan   Waar Hai     Kiska

✍ Zeeshan Azmi

دیا 144 ویں بین الاقوامی
فی البدیہہ طرحی مشاعرہ
میں میری کاوش:

آدمی   سوگوار   ہے   کس  کا
دنیا  میں   اعتبار ہے   کس کا

میں  مسافر  ہوں تنہا منزل کا
دوش پر میرے  بار ہے کس کا

سب نظر   آتے مطلبی    ہم کو
دہر میں   آج   یار ہے   کس کا

آرزو   ختم   ہی    نہیں   ہوتی
آدمی    کو    خمار  ہے کس کا

تیرا     پروردگار    ساتھ تو ہے
اب  تجھے    انتظار ہے کس کا

دوستو سے   خفا  تو لگتا   ہے
دل پہ   ذیشان وار ہے کس کا

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.