Sunday, December 3, 2017

Dahleez par khada hoo risalat ma'aab (saw) ki

دیا 223 ویں عالمی آن لائن فی البدیہہ
طرحی مشاعرہ میں میری کاوش:

دل میں اگر     ہے آرزو    بے حد ثواب کی
سنّت پہ    کر عمل      تو رسالت مآب کی

دو ٹکڑے  ہو گئے تھے     وہی  آسمان پر
سنتا ہے بات  چاند    بھی عالی جناب کی

شمس و قمر  کو رشک ہیں میرے قیام پر
دہلیز   پر   کھڑا ہوں     رسالت مآب    کی

امّت کے     باپ آپ ہیں    خلقِ عظیم بھی
حتمی کڑی     ہیں آپ نبوّت    کے باب کی

ذیشان اپنے     شافعِ محشر     رسول ہیں
محسوس ہم کو ہوگی نہ شدّت عذاب کی

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.