Saturday, December 30, 2017

Ek sham kabhi humko suhani nahi milti

Maloni me rahta hoon rawani nahi milti
Is hasti ko jeene  ki   nishani   nahi milti

Maloni ki aabo hawa na paak huwi hai
Ek sham kabhi humko suhani nahi milti

Khaliq ko jawani ki ebadat hi pasand hai
Do baar kabhi bande,  jawaani nahi milti

Kachre   me traffic me  sabhi  jeete lekin
Logo ki   yaha   soch   siyaani nahi  milti

Zeeshan jaha zindagi khush hal thi meri
Afsos   wo maloni    purani   nahi     milti

✍ Zeeshan Azmi

موجِ سخن کے تحت 219 ویں بین الاقوامی
فی البدیہہ طرحی آن لائن محفلِ مشاعرہ
میں میری کاوش :

مالونی میں    رہتا ہوں    روانی   نہیں ملتی
اس ہستی    کو جینے  کی نشانی نہیں ملتی

مالونی    کی   آب و ہوا   نا پاک      ہوئی ہے
اک شام    کبھی   ہم  کو  سہانی   نہیں لگتی

خالق   کو   جوانی   کی   عبادت ہی پسند ہے
دو بار    کبھی     بندے،   جوانی   نہیں ملتی

کچرے میں ٹرافک میں سبھی جیتے ہے لیکن
لوگو   کی یہاں   سوچ    سیانی   نہیں  ملتی

ذیشان   جہاں    زندگی خوشحال تھی  میری
افسوس    وہ    مالونی    پرانی   نہیں  ملتی

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.