Sunday, December 3, 2017

Matla e Subha ke aasaar se khushboo aayee

موجِ غزل 85 ویں فی البدیہہ عالمی طرحی
مشاعرہ میں میری کاوش:

مطلعِ صبح       کے     آثار سے خوشبو آئی
آمدِ سیدِ ابرار       سے           خوشبو   آئی

اعلی ہے     آپ کا     اخلاق    زمانے کے لئے
عمر بھر     آپ   کے   کردار سے خوشبو آئی

جب کبھی        نعرئے تکبیر      کہا لوگو نے
گنبدِ خضرا      کے مینار    سے   خوشبو آئی

میں ابھی باندھ کے نکلا ہی تھا گھر کے باہر
مصطفٰے نام    کے     دستار    سے خشبو آئی

آسماں والے     سبھی    پھول کلی شاہد ہیں
آپ    آئے   تو    سمن زار    میں  خوشبو آئی

ذکر ذیشان  محمد(ص)   کا کیا   جب تو نے
در حقیقت    ترے    گفتار    سے خوشبو آئی

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.