Monday, February 5, 2018

Aisi zulmat badhi unke ke jane ke baad

دیا عالمی آنلائن فی البدیہہ 232 ویں طرحی
مشاعرہ میں میری کاوش :

اک ضرورت  ہے دنیا  میں آنے  کے بعد
اک معلم     کی اک    عمر پانے کے بعد
ہم نے سیکھی ہیں اخلاق کی خوبیاں
اپنے   استاد    کے   مسکرانے   کے بعد
بالیقیں   رکھتا    ہے     مرتبہ   باپ کا
مجھ کو    شاگرد   اپنا   بنانے  کے بعد
نام عزت    سے    ہی ہم  لیا کرتے ہیں
اپنے  استاد    کا ہر    زمانے    کے بعد
کوئی    شاگرد   لائق   نہیں  ہو سکتا
اپنے  استاد    کو    آزمانے    کے   بعد
عمر بھر ہم   نے کی   سیوا  استاد کی
حق    مگر رہ  گیا  جان جانے کے بعد
ہائے   افسوس    کہ   کے   رقم کر دیا
ایسی ظلمت بڑھی ان کے جانے کے بعد
شاد ہوتا   ہے    ذیشان    استاد  خوب
طالب علم    کی    لو    جلانے کی بعد

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.