Thursday, February 8, 2018

Jo But Bhi Bahut Soch Kar Banate Hain

Jo Sar Ameero Ki Dahleez Par Jhukate Hain
Kisi Ke Aage Wo Phir Sar Nahi Uthaate Hain

Na Jane Kitne Bade Ho Gaye Hain Do Din Me
Saleeqa Kaam Ka Bachche Hame Sikhate Hai

Samaji Kaam Wo Khud Karte To Nahi Lekin
Sahih Aadami Par Ungliyaa'N Uthaate Hain

Rago Me Jin Ke Lahoo Daudta Hai Shaitaa Ka
Wo Log Hum Se Hamesha Nazar Churate Hain

Tariqa Hum Ko Sikhate Hain Wo Ibaadat Ka
Jo But Bhi Bahut Soch Kar Banate Hain

Khuda Ke Rang Me Jo Rang Jate Hain Zeeshan
Wo Sar Jhukate Nahi Balke Sar Katate Hain

✍ Zeeshan Azmi

موجِ سخن کے تحت 224 ویں بین الاقوامی
فی البدیہہ طرحی مشاعرہ میں میری کاوش :

جو سر   امیروں   کی دہلیز پر جھکاتے ہیں
کسی کے   آگے وہ  پھر سر نہیں اٹھاتے ہیں
نہ جانے کتنے   بڑے ہو گئے ہیں دو دن میں
سلیقہ کام   کا بچے   ہمیں    سکھاتے   ہیں
سماجی   کام   وہ  خود کرتے تو نہیں لیکن
صحیح    آدمی    پر    انگلیاں    اٹھاتے ہیں
رگوں میں   جن کے لہو دوڑتا ہے شیطاں کا
وہ لوگ    ہم سے  ہمیشہ    نظر   چراتے ہیں
طریقہ   ہم کو   سکھاتے ہیں   وہ عبادت کا
جو ایک بت  بھی بہت  سوچ   کر بناتے ہیں
خدا کے رنگ میں جو رنگ جاتے ہیں ذیشان
وہ سر   جھکاتے   نہیں   بلکہ سر کٹاتے ہیں

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.