Sunday, March 25, 2018

Kiyokar na zamane me Abbas ka charcha ho

منقبتِ عبّاس علیہ السلام:

بھائی کو     کہے    آقہ ایسا    میرا   مولا ہو
قمرِ بنی   ہاشم    کا وہ    چاند  سا چہرہ ہو

ہم آئے ہیں    محفل    میں عباسِ   دلاور کی
اب قرض   یہ محفل  کا صلوات سے پورا ہو

یہ سوچ    کے    حیدر   نے اللہ سے مانگا تھا
عبّاس شجاعت    میں    ہر گام    پہ یکتا ہو

ہو سکتی    نہیں   دوری  شبّیر سے غازی کی
جس    جگہ شجر    ہوگا لازم ہے کے سایا ہو

آجائو   ہراک    مل    کے اسلام کے دشمن تم
عبّاس کے    نظرو    سے   گر نار میں جانا ہو

کیا حال ہوا ہوگا اس شخص کا جس نے بھی
صفین    میں    حیدر سا عبّاس کو دیکھا ہو

کیا صبر    و شجاعت   ہے بے   مثل وفاداری
ممکن نہیں    دنیا   میں    عبّاس  سا پیدا ہو

کیا تم نے   کبھی دیکھا ایسے بھی مجاہد کو
بن ہاتھو   کے دشمن سے میدان  میں جیتا ہو

عبّاس تیرے    خط کو   گر   پار کوئی کر دے
سر تن   سے جدا ہوگا پھر چاہے   وہ جیسا ہو

یہ فیض    فقت پیاسے  عبّاس کو حاصل ہے
دریا میں    اتر آئے  اور پانی    سے مس نا ہو

تاعمر  اطاعت    کی عبّاس    نے    بھائی کی
قسمت    میں  ہماری بھی اس راہ پہ چلنا ہو

معصوم    صفت    والا  ہر چیز میں اعلی یے
کیو کر     نہ زمانے    میں  عبّاس کا چرچا ہو

عباس    کی الفت     میں  ذیشان نے لکھّا ہے
محشر     میں    الہی    یہ مقبول قصیدہ ہو

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.