Tuesday, March 20, 2018

Yeh Mehfil baraye Imam e Taqi hai

زباں    پر     قصیدہ     بہ   نامِ تقی ہے
کہ ہاتھوں میں میرے بھی جامِ تقی ہے

یہ    جشنِ ولادت  میں   آقا  کے میرے
ہر     اک     فرد  دیکھو    غلامِ  تقی ہے

یہاں     با وضو     آپ    تشریف   لائیں
یہ      محفل     برائے      امامِ تقی   ہے

نہ جھکنا    کبھی لوگو    ظالم کے  آگے
سبھی کے      لئے     یہ پیامِ      تقی ہے

بھلا کیوں    نہ ظاہر ہو تقوی عمل میں
دل و جاں    میں  میرے    کلامِ تقی ہے

ہمارے     لئے     یہ    یقیناً    اے  ذیشان
رجب     کی   ہراک  شام    شامِ تقی ہے

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.