Saturday, April 28, 2018

Muhabbat me yeh kya muqaam aa rahe hain

ہیں  مرتد جو حد سے بڑھے جا رہے ہیں
نیا رنگ   محفل   میں   دکھلا  رہے ہیں

لگاؤ نہیں   ہے    پڑھائی    سے  جن کو
وہ بیرونی    شاعر    کو    بلوا رہے ہیں

بھلا کیسے  پوچھیں گے  ہم مولوی سے
ہمارے    سوالوں    پہ     گرما  رہے ہیں

خدا جانے    کس کی  خوشامد میں ملّا
نیا  دین    ممبر    سے     بتلا   رہے ہیں

حساب   اس    کا دینا   پڑےگا خدا کو
اگر لوگ    حق    بات    جھٹلا رہے ہیں

بناتے ہیں بت   وہ    تقرب    کی خاطر
محبت میں    یہ    کیا   مقام آ رہے ہیں

جہنم کا جن کو نہیں  خوف کچھ بھی
وہ ذیشان    لوگوں    کو   بہکا رہے ہیں

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.