Saturday, October 20, 2018

Kya Sakina(s.a) ko aur satana hai

شام    تک    قید   ہو کے جانا ہے
غم     سکینہ    کو  اور اٹھانا ہے

رو نہیں     سکتی     سکینہ   کہ
شمر    کے     پاس     تازیانہ  ہے

صبر     کرنا    سکینہ     ہر  لمحہ
ظلم    کو     دنیا    سے  مٹانا ہے

شمر سہ لونگیں میں  تماچے بھی
کیوں   کے دینِ خدا    بچانا    ہے

کیوں کنیزیں میں مانگتا ہے یزید
کیا     سکینہ    کو   اور ستانا ہے

تھک گئی    جاگ   جاگ   کر بھیا
مجھ    کو  بابا کے  پاس جانا ہے

روئے   ذیشان   اس    تصور  میں
قبر    بی بی    کی  قید  خانہ ہے

✍ ذیشان اعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.