Wednesday, October 10, 2018

Shaam tak kaanto pe chalna puchiye Sajjad se

درد سہنا     صبر کرنا      پوچھئے      سجاد سے
غم    بہتّر     کا اٹھانا      پوچھئے     سجاد سے

ہر لعیں     کا کاٹ      دیتے کربلا   میں سر مگر
ناگہاں    بیمار     ہونا       پوچھئے    سجاد سے

کس   طرح   بتلاؤ میں  کے پیار کرتے تھے جسے
اس بہن    کو    دفن   کرنا    پوچھئے سجاد سے

راہِ کوفہ    سے    نکل  کر   شام  کے  دربار   تک
سر کُھلے   بی بی    کا جانا   پوچھئے سجاد سے

ہاتھوں میں ہے ہتھکڑی اور پیروں میں زنجیر ہے
شام تک کانٹوں   پہ   چلنا   پوچھئے   سجاد سے

انتہا   ہے    ظلم    کی   ذیشان   یہ   سجاد   پر
بے خطا    ہر    ظلم    سہنا   پوچھئے  سجاد سے

✍ ذیشان اعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.