Sunday, November 18, 2018

Dhoop hai qayamat ki saaibaaN nahi koi

ہے یقیں     محبت کا      یہ گماں  نہیں کوئی
عشق ہی    حقیقت     ہے  داستاں نہیں کوئی

اے صنم    ترا جلوہ     ہے مرے     تخیّل میں
تم ہو دل کی دھڑکن میں اور وہاں نہیں کوئی

عاشقی    میں    انساں کو کب  سکون ملتا ہے
دل کے    لاکھ  دشمن ہیں  مہرباں  نہیں کوئی

تیرے حسن    کے چرچے  ہیں اگر جو دنیا میں
مجھ سا بھی   زمانے میں نو جواں نہیں کوئی

برق    نے    جلا   ڈالا    جو   مرا نشیمن   تھا
زیرِ آسماں    میں    ہوں   ہے مکاں نہیں کوئی

تنہا   یہ    سفر     اپنا     دور ہے     بہت منزل
دھوپ ہے    قیامت    کی    سائباں نہیں کوئی

عاشقی    تو    اے ذیشان     نام ہے  جدائی کا
اپنی     آزمائش     کا     امتحاں    نہیں  کوئی

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.