Sunday, November 4, 2018

Ghol kar pee gaye saare gham eak dum

کھا گئے   بے وفائی میں غم  ایک دم
آنکھیں ہونے   لگی   میری نم ایک دم

کتنی قربانی   اس    کے لئے دے چکے
قصہ   وہ  کیا سنائیں گے ہم ایک دم

پوچھتا ہے کوئی ہم سے تو کہتے ہیں
اس نے ڈھائے ہیں ہم پر ستم ایک دم

بے وفا    کا    بھلا   ذکر ہم  کیا کریں
گھول   کر پی گئے سارے غم ایک دم

مجھ    کو    ذیشان  برباد وہ کر دیا
عاشقی    میں  جو اٹھا قدم ایک دم

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.