Sunday, November 4, 2018

Har aadmi neta se pareshaan bahut hain

ماں باپ    کا    اولاد    پہ احسان بہت ہیں
افسوس    اسی    بات  سے انجان بہت ہیں

کیوں پڑتا ہے چکر میں کتابوں کی مسلماں
قرآن    ہدایت     کے     لئے    مان بہت ہیں

عاقل ہو اگر دوست  تو جاہل سے رہو دور
جاہل سے    خطاکاری    کا امکان  بہت ہیں

اس شہر    میں    آرام  نہیں چین نہیں ہے
ہر آدمی    نیتا    سے     پرشان     بہت ہیں

در در    پہ    کیا کرتے ہیں فریاد یہاں لوگ
اس دنیا    میں لگتا ہے کے بھگوان بہت ہیں

کیا حال ہوا   دیکھ   تو نظروں کو اٹھا کر
شیشے کے    مکانات   میں   گلدان بہت ہیں

مشکل سے   کرتا ہوں یہاں رب کی عبادت
شیطان میرے    شہر میں  ذیشان بہت ہیں

✍ ذیشان اعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.