Tuesday, November 6, 2018

Khwaab achche dekh kar tabeer se darte rahe

بیکس و مظلوم    کی   تقریر   سے  ڈرتے رہے
جتنے ہیں ظالم   سبھی   تذکیر سے  ڈرتے رہے

ہیں بھرے تاریخ کے صفحات اہل ظلم و جور
عالموں کے   وعظ    کی    تاثیر سے ڈرتے رہے

باتیں   تو  قرآن    کی ہی مانتے  ہیں ہاں مگر
مولوی    کی ہم    لکھی  تفسیر سے ڈرتے رہے

ہم ارادہ کر    چکے   تھے  اک حکومت کا مگر
حوصلہ ہوتے   ہوئے    تقدیر   سے    ڈرتے رہے

نفس امارہ  نہ   بڑھ  کر کے  جکڑ لے پاؤں کو
اس لئے ہم   حسن   کی  زنجیر سے ڈرتے رہے

کیا بتائیں    حال   مایوسی   کا اپنا ہم تمہیں
خواب اچھے    دیکھ    کر تعبیر سے ڈرتے رہے

شاعری ذیشان کچھ توحید کی دشمن بھی ہے
شاعروں کی   اس   لئے     تحریر سے ڈرتے رہے

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.