Monday, March 25, 2019

Khoon ke Rishtey wafaa ki jo alamat hote

مال و زر   ہوتے   تو ہم   صاحبِ عزت ہوتے
آپ لوگوں    کی دعاؤں    سے  سلامت ہوتے

سب کے اعمال اگر   ماتھے پہ لکھ دیتا خدا
چھوڑ   کر  کچھ کو سبھی قابلِ نفرت ہوتے

کاش اس نے    کبھی    اک    بار   بلایا ہوتا
ان کے    دربار   میں ہم حاضرِ خدمت ہوتے

دور   اس  دیس سے جانا تھا ہمیشہ کے لئے
دوست ہم آپ کے تھے بول کے رخصت ہوتے

پڑھتے  اشعار ہمارے  بھی کھبی فرصت سے
آپ کی    نظروں   میں ہم لائقِ مدحت ہوتے

قدر ہوتی   ہی نہیں  دوستوں کی دنیا میں
خون کے   رشتے   وفا کی  جو علامت ہوتے

خلق  ذیشان   خدا    کرتا    نہیں دوزخ  کو
سب   اگر دنیا    میں   پابندِ  شریعت  ہوتے

✍ ذیشان آعظمی

No comments:

Post a Comment

Your comments are appreciated and helpful. Please give your feedback in brief.